rubinbiswas

اس شب اس تنہائ میں

 اس شب اس تنہائ میں
        وہ یادوں میں کھوٰی ھوئ
        اندھئاروں میں سسکی سی درو دیوار سے    گونچے  
         گھر انگن اس کے انتطار میں اونگ رے وہ گگن کے پار
         ان ستادوں سے باتی کر رھی تھی چانے کیا اس کے
         دل بے گزر رھی تھی کتنا آسان ے بھلا دینا ایسے مین
         دکھ کے انسو  بھر اے عجب یہ دل کی لگی رات بھی
          اداس کھڑی بانہی پھلائے ان خاموشیوں سے دوستی
          بڑی گہری خیالون کی بستی میں افسردہ چاند رونق
           جس کے دم سے تھی اس دوست کی یادیں وجہ
            گریہ بن گئ
           



To be able to comment and rate this poem, you must be registered. Register here or if you are already registered, login here.